844

سندھ ہائی کورٹ نے آرزو راجہ کی شادی کم عمری کے باعث غیر قانونی قرار دیدی

سندھ ہائی کورٹ نے اسلام قبول کرکے پسند کی شادی کرنے والی آرزو راجہ کی علی اظہر سے شادی کم عمری کے باعث غیر قانونی قرار دے دی۔

سندھ ہائی کورٹ میں آرزو راجہ کیس کی سماعت ہوئی، اس موقع پر آرزو کی عمر کے تعین کے حوالے سے میڈیکل بورڈ کی رپورٹ عدالت پیش کردی گئی، رپورٹ کے مطابق آرزو کی عمر14 سے15سال کے درمیان ہے۔

عدالت عالیہ نے میڈیکل رپورٹ کی روشنی میں کم عمر ہونے پر آرزو کی علی اظہر سے شادی غیر قانونی قرار دے دی۔

سندھ ہائی کورٹ کے تحریری فیصلے میں کہاگیا ہےکہ کم عمری کے باعث آرزو علی اظہر سے قانونی طور پر شادی نہیں کرسکتی۔

عدالت نے شادی کرانے کے ذمہ داروں کے خلاف مقدمہ چلانے اورکم عمری میں شادی کو ممنوع قرار دینے والے قانون کی دفعات مقدمے میں شامل کرنے کا حکم بھی دیا۔

عدالت کے تحریری حکم میں کہا گیا ہے کہ شادی کرانے والوں کے ناموں کی نشاندہی لڑکی کے والد نے کردی ہے، میڈیکل رپورٹ، نیشنل ڈیٹابیس رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) سمیت اسکول ریکارڈ، چرچ کی طرف سے برتھ سرٹیفکیٹ اور والدین کی گواہی سے آرزو کی کم عمری ثابت ہوتی ہے، 18برس سے کم عمر میں شادی کرنا قانوناً جرم ہے اس لیےلڑکی کو علی اظہر کے حوالےنہیں کیاجاسکتا۔

تحریری حکم میں کہاگیا کہ قانونی طور پر آرزو کے لیے دو آپشن ہیں، آرزو قانونی طور پر والدین یا شیلٹر ہوم میں رہ سکتی ہے تاہم والدین کے پاس جانے سے انکار کے بعد آرزو کو شیلٹر ہوم بھیج دیاگیا،عدالت نے آرزو کی بہتر تعلیم و تربیت کے انتظامات کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں