446

مختصر نوٹ – پاکستانی مسیحیوں کے لئے

آج کل عموماً فیس بک پرہمارے پاکستانی مسیحی مبصرین یہ شکوہ کرتے نظر آتے ہیں کہ آزادیِ پاکستان (1947ء) سے لے کر 2020ء تک کس طرح ہمارے یعنی پاکستانی مسیحی قوم کے حقوق اکثریت کے ہاتھوں پامال ہوئے ہیں۔ مثلاً
1۔ وہ مسیحی ہیرو جن کا تذکرہ پاکستانی تاریخ میں ہونا چاہیے، اُن کو فراموش کیا گیا ہے۔ صرف گِنے چُنے مسیحی ہی اُن سے واقف ہیں۔
2۔ مسیحی تعلیمی وفلاحی ادارے چھِین لئے گئے اور مِشنریوں کو واپس جانا پڑا۔ عبادت خانوں اور اداروں کے حفاظتی خدشات اور حملے۔
3۔ سیاسی طور پربھی تعصب اور دیگر باتوں کا سامنا کرنا پڑا۔
4۔ نوکریوں کے مسائل اوردیگر شعبہ ہائے زندگی میں مذہبی امتیاز اور تعصب
5۔ مسیحیوں لڑکیوں کی زبردستی و بخوشی تبدیلیءِ مذہب اور سلسلہ ازدواج
6۔ مسیحیوں کی تعلیمی و معاشی حالت اور ملک سے بھاگنا
اِسی طرح چرچ کو بھی ذمہ دار ٹھہرایا جاتا ہے کہ وہ صحیح طور سے اپنی ذمہ داریاں نہیں نبھا رہا۔ اور بعض باتوں میں ہم مسیحیت کو پیچھے چھوڑ کر اور باتوں کو اِس پر ترجیح دیتے ہیں جو کہ سراسرغلط ہے۔
عزیزم، اب باربارافسردہ ہونا اورشکوہ کرنا مناسب نہیں ہے۔ پاکستان میں دیگر اقلیتیں یعنی سکھ، پارسی ودیگربھی موجود ہیں مگر وہ تعلیمی ومعاشی طور پرکہیں زیادہ مستحکم ہیں۔ مگر ہم من حیث القوم جہاں تھے، اُس سے بھی کہیں پیچھے کھڑے ہیں۔ واویلا یا افسوس کرنے سے کچھ نہیں ہوگا۔ ہر ایک شخص کو اپنا فرض اور ذمہ داری نبھانے کی ضرورت ہے۔ چرچ کو اپنی، سیاست دانوں کو اپنی، سماجی کارکنان کو اپنی اور ہر ایک عام مسیحی کو اپنی۔
ایک دوسرے کو موردِالزام ٹھہرانے کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ اِبلیس یہی تو چاہتا ہے اور یقینی طور سے اُس کے پیروکار بھی۔
ہمیں کرنا کیا ہے، سب مل کر سوچیں۔ لائحہ عمل بنائیں۔ سوچیں، آج ہم کہاں ہیں، 10 یا 20 سال بعد ہمیں کہاں ہونا چاہیے۔ کسی دوسرے بھائی کے ساتھ کوئی مسئلہ ہوتا ہے تو سب مل کر اُس کا حل ڈھونڈیں۔ آواز چاہے نہ لگائیں بلکہ آواز لگانے والے ساتھ جا کر کھڑے ہوجائیں۔ ٭پودا نہیں لگا سکتے تو نہ لگائیں، روپے سے پودا لگانے والے کی مدد کرسکتے ہیں۔ اُس ٭پودے کو پانی نہیں لگا سکتے تو پانی لگانے والے کی مدد ضرور کرسکتے ہیں۔ ٭پودے کی حفاظت کرسکتے ہیں۔
مگر اِس سب کے لئے ہمیں اُٹھنا ہوگا، باہر نکل کر گلیوں میں جانا ہوگا اور ایک دوسرے کو تھامنے کے لئے ہاتھوں کو آگے بڑھانا ہوگا۔
بارک اللہ فیک!

٭ پودا: لفظی اور استعاراتی دونوں معنوں میں مستعمل ہے۔

رائیٹ ریورنڈ ارسؔلان الحق
ماڈریٹر
ستلج ریفارمڈ چرچ آف پاکستان

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں